کے پی میں ڈینگی کنٹرول کیلئے مانیٹرنگ ٹیمیں تشکیل

وزیر اعلیٰ خیبر پختونخوا پرویز خٹک نے کہا ہے کہ صوبائی حکومت نے ڈینگی وائرس پر قابو پانے کیلئے ایک منظم طریقہ کار اختیار کر رکھا ہے۔اس مقصد کیلئے مانیٹرنگ ٹیمیں تشکیل دی گئی ہیں اور مصدقہ ڈیٹا اکھٹا کرنے کیلئے ڈپٹی کمشنر پشاور کو فوکل پرسن نامزد کیا گیا ہے۔ڈینگی وائرس کو کنٹرول کرنے ، ڈینگی سے متاثرہ مریضوں کے علاج معالجے اور ڈینگی وائرس کی افزائش والی جگہوں کی صفائی پر مشتمل مجموعی بحالی کے عمل کیلئے مختلف صوبائی محکموں کومختلف ذمہ داریاں تفویض کی گئی ہیں۔وہ وزیراعلیٰ سیکرٹریٹ پشاور میں روٹری انٹرنیشنل کے کوارڈنیٹر ڈیوڈ ٹانگ کی سربراہی میں روٹری کلب کے نمائندہ وفد سے گفتگو کررہے تھے ۔ وفد کے دیگر اراکین میں ڈائریکٹر جنرل روٹری انٹرنیشنل فیاضہ، ڈی جی این عدنان روحیلہ ، سی ڈی جی اور خیبرپختونخو امیں پولیو کے سفیر خورشید خان شامل تھے ۔اراکین صوبائی اسمبلی شوکت علی یوسفزئی ،زرگل خان اور دیگر متعلقہ حکام بھی اس موقع پرموجود تھے ۔وفد نے وزیراعلیٰ کو سنگاپور ، بونیر اور ملایشیامیں ڈینگی کو کنٹرول کرنے کیلئے اُٹھائے گئے اقدامات اور اپنے تجربات سے آگاہ کیا۔ انہوں نے اپنے تجربات کی بنیاد پرصوبائی حکومت کو ہر ممکن تعاون کی پیشکش کی ۔وزیراعلیٰ نے وفد کی طرف سے صوبائی حکومت کو معاونت کی پیشکش کا خیر مقدم کیا اور کہاکہ وہ پشاور اور صوبے کے دیگر اضلاع میں ڈینگی وائرس پر قابو پانے کیلئے دوسرے ممالک کے کامیاب ماڈلز سے استفادہ کرنا چاہتے ہیں۔ وزیراعلیٰ نے ڈینگی وائرس پر قابو پانے کے سلسلے میں حکومتی اقدامات پر روشنی ڈالی اور کہا کہ اس سے پہلے ضلع سوات میں ڈینگی کا وائرس پھیلا تھا جس پر موثر انداز سے قابو پا لیا گیا تھا۔ پشاور میں ڈینگی وائرس کا ایک نیا تجربہ ہے تاہم انہوں نے ڈینگی وائرس کے کنٹرول اور ڈینگی وائرس سے متاثرہ مریضوں کی دیکھ بھال اور مانیٹرنگ کیلئے تمام محکموں کو متحرک کر دیا ہے ۔ڈینگی وائرس سے متاثرہ مریضوں کیلئے علیحدہ وارڈز قائم کئے گئے ہیں اور مریضوں کو مفت علاج مہیا کیا جارہا ہے۔انہوں نے کہاکہ وہ مختلف سطحوں پر اقدامات کی اپ ڈیٹس خود لے رہے ہیں اور عوام کے اطمینان کیلئے تمام کاوشوں کو باہم مربوط رکھنے کی ہدایات جاری کر چکے ہیں۔ وزیراعلیٰ نے کہاکہ ڈینگی وائرس کے اچانک پھیلاؤ پر انتہائی برا تاثر دیاگیا جب اس انسانیت کے مسئلے پر سیاست کی گئی اور حکومتی کاوشوں کو مشکوک بنایا گیا ۔وزیراعلیٰ نے کہا کہ وہ صوبے بھر کے منتخب نمائندوں کو بدستور ہدایات جاری کرچکے ہیں کہ وہ ڈینگی سے متاثرہ علاقوں میں اپنی موجودگی یقینی بنائیں اور اس مرض پر قابو پانے کیلئے اپنا کردار ادا کریں ۔ پرویز خٹک نے کہاکہ ڈینگی وائرس کیلئے خطرناک موسم نومبرسے مارچ کے دوران ڈینگی کی افزائش والے مقامات اور جگہوں کی صفائی کیلئے ہر سطح پر مطلوبہ اقدامات اُٹھائے جارہے ہیں جس کے لئے تمام حکومتی مشینری کو متحرک کیا گیا ہے۔کمشنر پشاور اور محکمہ صحت ڈینگی وائرس کی صورت میں پیش آنے والے چیلنجز سے نمٹنے کیلئے باہم مربوط اور منظم منصوبہ بندی یقینی بنائیں گے ۔آج ہم ڈینگی سے متاثرہ افراد کا اصلی ڈیٹا اکھٹا کرنے پر توجہ مرکوز کئے ہوئے ہیں تاکہ ڈینگی وائرس کو کامیابی سے ختم کیا جاسکے ۔ وزیراعلیٰ نے عوام میں ڈینگی وائرس کے خلاف آگاہی کی سطح بلند کرنے کیلئے محکمہ اطلاعات کی پبلسٹی مہم اور آگہی کے مجموعی عمل پر بھی روشنی ڈالی .

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s