محکمہ انسداد دہشگردی خیبر پختونخوا نے گزشتہ 7 ماہ کی جائزہ رپورٹ 2017 جاری کردی۔

سال 2017 میں دشتگردی کی شرح پچھلے دس سالوں کے مقابلے میں سب سے کم رہی۔
سال 2009 میں دہشتگردی کے سب سے زیادہ واقعات رونماہوئے اور کل 927 کیسز رجسٹر ڈہوئے
سال 2016 میں دہشتگردی کے کل 274 واقعات رونما ہوئے ۔
سال 2017 میں اب تک دہشتگردی کے 90 واقعات رونما ہوئے جو2009 کے مقابلے میں 70 فیصد کمی واقع ہوئی ہے ۔
سال 2009 میں اغوا برائے تاوان کے سب سے زیادہ واقعات رونماہوئے اور کل178 کیسز رجسٹر ڈہوئے ۔
سال 2016 میں اب تک پرامن سال رہا جس میں اغوا برائے تاوان کے کل 16واقعات رونما ہوئے ۔
سال 2017 میں اب تک اغوا برائے تاوان کے 06 واقعات رونما ہوئے جو 2009 کے مقابلے میں 7 9فیصد کمی واقع ہوئی ہے ۔
سال 2013 میں ٹارگٹ کلنگ کے643 کیسز رجسٹر ڈہوئے ۔ سال 2016 میں ٹارگٹ کلنگ کے کل72واقعات رونما ہوئے ۔
سال 2017 میں اب تک ٹارگٹ کلنگ کے21 واقعات رونما ہوئے ،2013 کے مقابلے میں 7 9فیصد کمی واقع ہوئی ہے ۔
سال 2014 میں بھتہ خوری کے سب سے زیادہ واقعات رونماہوئے اور کل344 کیسز رجسٹر ڈہوئے ۔
سال 2016 میں بھتہ خوری کے کل44واقعات رونما ہوئے ۔
سال 2017 میں اب تک بھتہ خوری کے16 واقعات رونما ہوئے،2014 کے مقابلے میں5 9فیصد کمی واقع ہوئی ہے ۔
سال 2017میں تمام جرائم کی شرح پچھلے دس سالوں کے مقابلے میں سب سے کم رہی سال 2016 میں تمام جرائم کے سب سے زیادہ واقعات رونما ہوئے
خیبرپختونخوا ملک کا سب سے زیادہ پرامن صوبہ بنتا جارہاہے۔

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s